1947ء 2لاکھ 37ہزار مسلمانوں کا قتل ہوا

بھارت نہ صرف مقبوضہ کشمیر میں قتل و غارت گری کر رہا ہے
معصوم کشمیریوں کے وجود کو مستقل خطرہ لاحق ہے، سردار مسعود خان

واشنگٹن ڈی سی…. صدر آزاد جموں وکشمیر سردار مسعود خان نے کہا ہے کہ بین الاقوامی برادری بالخصوص امریکہ کو مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کا فی الفور نوٹس لینا چاہیے، اور اس مسئلے کے پرامن اور مستقل حل کے لیے سنجیدگی سے اقدامات اٹھانے چاہیے۔ صدر نے ان خیالات کا اظہار واشنگٹن کے معروف تھنک ٹینک مڈل ایسٹ انسٹیٹیوٹ کے جنوبی ایشیاء کے ماہرین سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں نہتے اور معصوم کشمیریوں پر ظلم وتشدد اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں کر کے بھارت انسانیت کے خلاف جرائم کا مرتکب ہو رہا ہے۔ صدر نے بین الاقوامی برادری پر زور دیا کہ وہ سیاسی ، معاشی ، تجارتی ترجیحات سے بالا تر ہو کر اپنی اخلاقی و قانونی ذمہ داریوں کو پورا کرتے ہوئے مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے جاری انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کو روکنے کے لیے اپنا کلیدی کردار ادا کریں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نہ صرف مقبوضہ کشمیر میں قتل و غارت گری کر رہا ہے بلکہ وہ نام نہاد سٹرٹیجک اور معاشی برتری کے ذریعے اہم مغربی ممالک کو بلیک میل بھی کر رہا ہے۔ اور بین الاقوامی برادری کی مقبوضہ کشمیر میں جاری پر تشدد انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر خاموشی سے بھارت کو مزید شہ مل رہی ہے۔ بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں جاری پر امن اور غیر مسلح تحریک آزادی کو دہشت گردی کا رنگ دے کر بین الاقوامی برادری کو گمراہ کر رکھا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ دراصل بھارت مقبوضہ کشمیر میں نہتے پر امن کشمیریوں کا بڑے پیمانے پر قتل عام کر رہا ہے، حالانکہ کشمیری غیر مسلح ہیں اور وہ آزادی کا مطالبہ کر رہے ہیں جو کسی قسم کی دہشت گردی میں ملوث نہیں ہیں۔ صدر آزاد جموں وکشمیر نے کہا کہ بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کو علاقائی سیاست کے تناظر میں ہر گز نہ دیکھا جائے۔ پاکستان اور بھارت کے ساتھ ساتھ کشمیری عوام بھی مسئلہ کشمیر کے بنیادی فریق ہیں جنہیں کسی طور پر بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے اقوام متحدہ کو سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عملدرآمد کی اپنی ذمہ داری کو پورا کرنا چاہیے۔ صدر مسعود خان نے اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عملدرآمد سے متعلق سوال کے جواب میں کہا کہ بھارت پہلے سے ہی اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عملدرآمد کرنے سے منحرف ہے جبکہ مسئلہ کشمیر کا واحد جمہوری اور پر امن حل صرف اور صرف اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عملدرآمد سے ہی ممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت اپنی ریاستی مشینری کے ساتھ ساتھ حکمران جماعت کی سیاسی قوتوں کے ذریعے معصوم کشمیریوں کو دہشت گردی کانشانہ بنا رہا ہے اوربھارتی انتہاء پسند ہندو جماعت راشٹریا سوائم سوک سنگ (RSS) کے انتہاء پسند جموں وکشمیر میں آبادی کا تناسب اپنے حق میں تبدیل کرنے کے لیے مسلسل کوشاں ہیں ، جس طرح 1947ء میں انہوں نے 2لاکھ 37ہزار سے زائد مسلمانوں کا قتل عام کیا تھا۔ تاہم صدر مسعود خان نے کہا کہ کشمیری عوام کبھی بھی اپنی سیاسی خواہشات اور تحریک آزادی پر سمجھوتہ نہیں کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں