ناقابل ضما نت وارنٹ گرفتاری جاری

اسلام آباد.. احتساب عدالت اسلام آباد کے جج محمد بشیر نے وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے خلاف ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کر دیے۔منگل کو اسلام آباد کی احتساب عدالت میں اسحاق ڈار کے خلاف آمدن سے زائد اثاثے بنانے سے متعلق ریفرنس کی سماعت ہوئی جس میں اسحاق ڈار پیش نہیں ہوئے اور ان کے ضامن کے احمدعلی قدوسی پیش ہوئے۔ جج نے اسحاق ڈار کے ضامن سے استفسارکیا کہ اسحاق ڈار کہاں ہیں؟ جس پر وزیر خزانہ کے وکیل کا کہنا تھا کہ اسحاق ڈار کی میڈیکل رپورٹ کے مطابق 3 سے 6 ہفتے صحت یابی میں لگ سکتے ہیں۔ عدالت نے ملزم کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کردیے۔اس سے قبل نیب کے تفتیشی افسر کے نہ پہنچنے پر وزیرخزانہ اسحاق ڈار کے خلاف آمدنی سے زیادہ اثاثے بنانے کے ریفرنس کی سماعت میں وقفہ کردیا گیا۔سماعت کے آغاز پرعدالت نے سوال کیا کہ تفتیشی افسر کے آنے میں کتنی دیر ہے ؟اس پر نیب پراسیکیوٹرنے بتایا کہ اس کیس کے تفتیشی افسر بھی لاہور سے آتے ہیں،تفتیشی افسر 10منٹ تک پہنچ جائیں گے۔اس موقع پر اسحاق کے وکیل نے عدالت سے درخواست کی کہ مجھے اسلام آباد ہائیکورٹ پہنچنا ہے،سماعت12بجے تک ملتوی کی جائے۔احتساب عدالت اسلام آباد کے جج محمد بشیر نے سماعت کچھ دیرکے لیے ملتوی کردی۔وزارت خزانہ کے ذرائع کے مطابق اسحق ڈار کی علالت کی وجہ سے وطن واپس نہیں ہوسکی لہذا عدالت میں پیشی بھی ممکن نہیں۔واضح رہے کہ گزشتہ سماعت پر احتساب عدالت نے اسحاق ڈار کے استثنی سے متعلق درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے وزیر خزانہ کے قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری کو برقرار رکھا تھا۔ نیب نے پاناما کیس میں سپریم کورٹ کے فیصلے کی روشنی میں شریف خاندان پر 3 جب کہ اسحاق ڈار پر ایک ریفرنس دائر کیا ہے۔

وزارت خزانہ کے ذرائع کے مطابق اسحق ڈار کی علالت کی وجہ سے وطن واپس نہیں ہوسکی لہٰذا عدالت میں پیشی بھی ممکن نہیں۔
گزشتہ سماعت میں وزیر خزانہ کے استثنا اور نیب کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے عدالت نے حکم دیا تھا کہ اسحاق ڈار کم از کم ایک مرتبہ خود عدالت کے سامنے پیش ہوں ۔
فاضل عدالت نے متنبہ کیا تھا کہ ضامن نے ملزم کو آئندہ سماعت پر پیش نہ کیا تو اس کی طرف سے داخل کرائے گئے 50 لاکھ روپے مالیت کے ضمانتی مچلکے ضبط ہوجائیں گے ۔
عدالت نے اسحاق ڈار کے قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری برقرار رکھتے ہوئے 20 لاکھ روپے کے مزید ضمانتی مچلکے داخل کرنے کا حکم دیا تھا ۔
وزارت خزانہ کے ذرائع کے مطابق اسحق ڈار کی علالت کی وجہ سے وطن واپس نہیں ہوسکی لہٰذا عدالت میں پیشی بھی ممکن نہیں ہوگی۔
دوسری جانب چیئرمین نیب نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کے مزید اثاثے منجمد کرنے کا حکم دیدیا، جن اثاثوں کو سیل کیا جائے گا، ان میں رائے ونڈ روڈ لاہور کے 2 پلاٹ شامل ہیں۔
نیب ذرائع کے مطابق اسحاق ڈار کے مزید اثاثے منجمد کرنے کے فیصلے کی احتساب سے توثیق کرائی جائے گی، جس پراپراٹی کو سیل کیا جائے گا، اس میں رائیونڈ روڈ لاہور کے پلاٹ بھی شامل ہیں، جو ہجویری ٹرسٹ کی ملکیت ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں