ہندوارہ میں دو کشمیری نوجوانوں شہید

سری نگر.بھارتی فوج نے ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی میں ہندوارہ قصبے میں دو کشمیری نوجوانوں کو شہید کر دیا ہے بھارتی فوج نے کئی دیہات کی ناکہ بندی کرکے شہریوں کو احتجاج سے بھی محروم کر دیا ہے شمالی کشمیرمیں انٹرنیٹ سروس بند کردی گئی ہے سرینگر بارہمولہ ریل سروس بھی معطل کر دی گئی ہے۔ہندوارہ کے زچلڈارہ علاقے میں فوج کی 21راشٹریہ رائفلز اور سپیشل آ پریشن گروپ ہندوارہ نے علاقہ کو محاصر ہ کر لیا ۔ فورسز کی کارروائی سے طیب ساکن براٹھ کلاں سوپور اور عاشق حسین ساکن پلہالن پٹن مارے گئے۔ احتجاجی مظاہروں کوٹالنے کیلئے زچلڈارہ ہندواڑہ اور اس کے ملحقہ علاقوں کو پوری طرح سے سیل کردیا گیا ہے ادھرجنوبی کشمیر کے قاضی گنڈ قصبے میں راشٹریہ رائفلز کی 9ویں بٹالین اور جموں کشمیر پولیس کے سپیشل آپریشن گروپ کے اہلکاروں نے محاصرے میں لے لیا ہے ۔حاجن میں کریک ڈائون کے دوران ایک 26سالہ مزدور کو گرفتار کیا گیا۔کریک ڈائون کے دوران فورسز اور مظاہرین میں جھڑپیں بھی ہوئیں۔ میر محلہ حاجن کا 13 آر آر ،ایس او جی اورسی آر پی ایف نے صبح سویرے محاصرہ کر لیا اور گھر گھر تلاشی لی۔ اس دوران نوجوانوں کی بڑی تعداد نے فورسز پر پتھرائو کیا اور جواب میںفورسز نے شلنگ کی ۔ مقامی لوگوں کے مطابق فورسز 26 سال کے مزدور اشفاق احمد ڈار کو اٹھا کر اپنے ساتھ لے گئے ۔ادھر رنگوار لال پورہ لولاب کا28آر آر اور پولیس کے سپیشل آپریشن گروپ نے ناکہ بندی کردی اور علاقے کے راستے سیل کردیئے گئے۔بعد میں تلاشی آپریشن شروع کیا گیا جو کئی گھنٹوں تک جاری رہا۔ اس سے قبل حسن پورہ بجبہاڑہ ،کپواڑہ اور حاجن بانڈی پورہ میں سیکورٹی فورسز نے بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کیا ۔ معلوم ہوا ہے کہ کپو اڑہ میں عسکریت پسندوں کو تلاش کرنے کیلئے فضائیہ کی بھی خدمات حاصل کی گئیں۔ فوج کی بھاری جمعیت نے رانگوار اور لالپورہ کپواڑہ کے پہاڑی علاقوں کو محاصرے میں لے کر تلاشی کارروائی شروع کی اس دوران ہیلی کاپٹروں کے ذریعے جنگلات کی نگرانی کی گئی تاہم عسکریت پسندوں اور فورسز کے درمیان آمنا سامنا نہیں ہوا۔ دفاعی حسن پورہ بجبہاڑہ میں آپریشن کے دوران گھر گھر تلاشی لی گئی جس دوران مکینوں کے شناختی کارڈ چیک کئے گئے۔
#/S

اپنا تبصرہ بھیجیں