مفاہمت کی سیاست،شاہد خاقان کوٹاسک

لاہور…مسلم لیگ (ن) کی اعلیٰ قیادت نے قبل از وقت انتخابات کرانے کا مطالبہ مسترد کردیا ۔ عوام رابطہ مہم شروع کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ سابق وزیراعظم محمد نوازشریف کی صدارت میں جاتی امراء رائے ونڈ میں ہونے والے پارٹی اجلاس میںسیاسی جماعتوں سے روابط تیز کرنے پر بھی غور ہوا۔نئی حلقہ بندیوں سے متعلق آئینی ترمیم ،آئینی ترمیم کیلئے پیپلزپارٹی سمیت دیگر سیاسی جماعتوں سے رابطے بڑھانے پر اتفاق کیا گیا۔ اجلاس میں نوازشریف نے پیپلزپارٹی سے بات چیت کیلئے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کومینڈیٹ دیاہے۔ آئندہ عام انتخابات سے متعلق آئینی ترمیم کیلئے بھی نوازشریف کواعتماد میں لیاگیا۔شرکاءنے اس عزم کا اعادہ کیا کہ عام انتخابات کو اپنے وقت پر کرانے کیلئے ہر ممکن اقدامات کئے جائیں گے۔اجلاس میں متفقہ طورپرفیصلہ کیاگیا کہ سابق وزیراعظم نوازشریف کی کردار کشی ہرگزبرداشت نہیں کی جائے گی۔اجلا س کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ اجلاس میں پارٹی کی تنظیم سازی سے متعلق مشاورت کی گئی۔ پارٹی کی سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی اسی ماہ تشکیل دی جائے گی۔ پارٹی کا سنٹرل پارلیمانی بورڈ بھی تشکیل دیا جائے گا -مسلم لیگ ن کومتحرک کرنے کی مہم شروع کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف ایبٹ آباد میں جلسہ عام سے خطاب کریں گے جس کے بعد ملک کے دیگر شہروں میں بھی جلسے ہوں گے -دریں اثناءوزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے سابق وزیراعظم نواز شریف سے کہا ہے کہ حالات کا تقاضا ہے کہ اداروں سے ٹکراو نہ کیاجائے۔ مفاہمت کی سیاست سے کبھی حالات کا مقابلہ کیا جا سکتا ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں