ایران،عراق زلزلہ، 330 سے زیادہ ہلاکتیں

عراق اور ایران کے سرحدی علاقے میں آنے والے زلزلے سے ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد 335 ہوگئی ہے جبکہ ہزاروں افراد زخمی ہیں۔
ایرانی حکام کے مطابق سات اعشاریہ تین شدت کے زلزلے کے نتیجے میں بیشتر ہلاکتیں عراقی سرحد سے متصل ایران کے مغربی صوبے کرمانشاہ میں ہوئی ہیں۔

ایک ایرانی امدادی ادارے کا کہنا ہے کہ زلزلے سے متاثر ہونے والے 70 ہزار افراد کو فوری طور پر امداد اور پناہ گاہوں کی ضرورت ہے۔
کرمانشاہ صوبے میں 300 سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ عراق میں اب تک زلزلے سے سات افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی گئی ہے۔
عراق کے دارالحکومت بغداد میں زلزلے کے بعد لوگوں سڑکوں پر نکل آئے۔
تین بچوں کی والدہ ماجدہ امیر نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ ‘میں اپنے بچوں کے ساتھ بیٹھ کر کھانا کھا رہی تھی کہ اچانک بلڈنگ ہوا میں جھولنے لگی۔ پہلے تو مجھے لگا کہ کوئی بم دھماکہ ہوا ہے۔’
ایرانی خبر رساں ادارے ارنا نے طبی حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ 3950 افراد زخمی ہوئے ہیں۔
ایران کے سرکاری ہنگامی امدادی ادارے کے سربراہ پیر حسین قلیوند نے سرکاری ٹی وی پر بیان میں کہا ہے کہ ہلاک شدگان اور زخمیوں میں سے بیشتر کا تعلق سرحد سے 15 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع قصبے سرپل ذہاب سے ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں